شرائط و ضوابط – فرسٹ ڈیبٹ کارڈ

یہ شرائط و ضوابط اے ٹی ایم / ڈیبٹ کارڈ کے سلسلے میں بینک اور کارڈ ہولڈر کے درمیان معاہدہ میں شامل ہیں۔ ان شرائط و ضوابط  کو بینک اکاؤنٹس کی شرائط و ضوابط کے ساتھ ملا کر پڑھنا ضروری ہے۔یہ شرائط و ضوابط، دی فرسٹ مائیکرو فنانس بینک لمیٹڈ (ایف ایم ایف بی) ڈیبٹ کارڈ کے ذریعے مختلف چینلز پر کی جانے والی اجازت کردہ ٹرانزکشنز کیلئے کسٹمر کی رضا مندی تصور کی جائیں گی۔

ان شرائط و ضوابط میں:

  • “اکاؤنٹس” کا مطلب بینک کا اکاؤنٹ ہے جو کارڈ ہولڈر کے نام پر رکھا جائے (اکاؤنٹ کسی اور شخص کے ساتھ مشترکہ بھی ہو سکتا ہے), جس کا نمبر کارڈکے درخواست فارم پر درج کیا جائے گا (اس امر کی وضاحت مناسب طور پر کسٹمر کو کی جائے گی)۔
  • “بینک ” کا مطلب دی فرسٹ مائیکرو فنانس بینک لمیٹڈ (ایف ایم ایف بی) کی وہ شاخ ہے جس میں اکاؤنٹ کھولا گیا ہو۔
  • “کارڈ” کا مطلب ایف ایم ایف بی کا جاری کردہ اے ٹی ایم / ڈیبٹ کارڈ ، بشمول کسی متبادل کارڈ کے ہے۔
  • “کارڈ ہولڈر” کا مطلب وہ شخص ہے, جو بینک مینجمنٹ کے مطابق اکیلے اکاؤنٹ چلانے کا مجاز ہو۔
  • “پن” کا مطلب ذاتی شناخت کا ایک ایسا خفیہ نمبر ہے جو کارڈ ہولڈر وقتا ً فوقتا ً کارڈ استعمال کرتے ہوئے استعمال کرتا ہے یا مذکورہ استعمال کے تحت ٹیلیفون پر ذاتی شناخت کا نمبر ہے۔
  • “ٹرانزکشن ” کا مطلب کسی بھی مجاز طریقے سے کارڈ کے ذریعے اکاؤنٹ میں رقم جمع کرنا یا رقم نکالنا, یا کسی مجاز طریقےسے  اکاؤنٹ میں رقم کے اضافے یا کمی کی صورت میں رقم کی واپسی ہے۔ اس میں “اے ٹی ایم” یا “پی او ایس” پر رقم کی منتقلی بھی شامل ہے۔
  • “چینل” کا مطلب کارڈ کا طریقہ ِ استعمال ہے جس کے ذریعے کوئی بھی ٹرانزکشن مکمل کی جاسکے۔ “اے ٹی ایم” اور “پی او ایس” کو چینل تصور کیا جائے گا۔

کارڈ کی سہولیات:

کارڈ کسی بھی خود کار (اے ٹی ایم)  مشین پر  کیش نکلوانے کیلئے یا اےٹی ایم  کے زریعے پیش کردہ کسی بھی اضافی بینکنگ خدمات تک رسائی حاصل کرنے کیلئے استعمال  کیا جا سکتا ہے ۔مثال کے طور پر بینک کے اندر ایک اکاؤنٹ سے دوسرے اکاؤنٹ یا پاکستان بھر میں کسی اور بینک اکاؤنٹ میں فنڈ ٹرانسفر یا بلوں کی ادائیگی وغیرہ۔ اس کے علاوہ کارڈ دنیا بھر میں ایسے سٹورز اور سپلائرز پر جہاں  کا نشان آویزاں ہو وہاں سامان کی خریداری یا سروسز کے حصول کیلئے استعمال کیا جا سکتا ہے جبکہ ایسی صورت  میں  PayPak کے وقتاً فوقتاً وضع کردہ قواعد و ضوابط لاگو ہوں گے۔

کارڈ کا اجراء:

بینک صرف اس صورت میں کسٹمر کو کارڈ جاری کرے گا جب  کسٹمر نے کارڈ کا درخواست فارم مکمل طور پر پُر کر لیا ہو اور کارڈ اور اکاؤنٹ کے شرائط و ضوابط کو قبول کر لیا ہو اور درخواست بینک نے قبول کر لی ہو۔ ایف ایم ایف بی میں اکاؤنٹ کھولنا اور اسے چلانا کارڈ کے اجراء کیلئے بنیادی شرط ہے.

کارڈ کی ملکیت:

کارڈ بینک کی ملکیت ہے۔ بینک یا بینک کا کوئی مجاز افسر ، ملازم، ایسوسی ایٹ (associate) یا ایجنٹ کسی بھی وقت کارڈ کو روکنے ، کارڈ ہولڈر کو کارڈ واپس کرنے کی ہدایت کرنے یا کارڈ کے استعمال کو روکنے کا مکمل اور حتمی طور پر مجاز ہے اور ایسی صورت میں کسٹمر کے کسی بھی قسم کے نقصان کا ذمہ دار بینک نہیں ہوگا۔ کارڈ ہولڈر کے علاوہ کوئی اور شخص کارڈ کو استعمال کرنے  کا مجاز نہیں ہے۔

کارڈ کی درستگی اور افزودگی (validit and activation) :

کارڈ تب تک فعال  یا کار آمد نہیں  کیا جائے گا جب تک کسٹمر کارڈ وصول کرنے کی تصدیق نہیں کردیتا اور کارڈ کے استعمال کے شرائط و ضوابط کو تسلیم نہیں کر لیتا۔ اس کے بعد ہی کارڈ کو بینک کے وضع کردہ طریقے  سے فعال کیا جا سکتا ہے۔ کارڈ صرف اس پر درج شدہ مدت کیلئے فعال رہے گا اور مذکورہ مدت کے بعد قابلِ استعمال نہیں ہوگا۔  زائد المیعاد کارڈ کو مقناطیسی پٹی اور چپ کو کاٹ کر ضائع کر دیا جائے۔

گمشدگی یا چوری اور متعلقہ تنازعہ:

کارڈ ہولڈر کارڈ یا پن کے غیر مجاز استعمال سے بچاؤ کی ہر ممکن کوشش کرے گا۔ کارڈ گم یا چوری ہونے کی صورت میں کارڈ ہولڈر فوری طور پر فرسٹ کنٹیکٹ سینٹر  پر مطلع کر کے اپنا کارڈ عارضی / مستقل طور پر بلاک کروائے گا، اس کے علاوہ کارڈ ہولڈر لازمی طور پر  اپنی برانچ کو تحریری شکل میں کارڈ کی گمشدگی یا چوری کی اطلاع دے گا۔ کارڈ ہولڈر کارڈ کے غیر مجاز استعمال کا تب تک ذمہ دار ہوگا جب تک وہ مذکورہ بالا طریقوں سے بینک کو مطلع نہ کر دے۔ اے ٹی ایم یا پی او ایس سے کی گئی ٹرانزکشنز یا الیکٹرانک فنڈ ٹراسفر میں تنازعے کی صورت میں کارڈ ہولڈر بینک کے فرسٹ کنٹیکٹ سینٹر  پر یا اپنی متعلقہ برانچ کو اطلاع دے گا۔ بینک شکایت موصول  کرنے کا پابند ہوگا اور 7 کاروباری دنوں میں شکایت کا ازالہ کرے گا ، البتہ شکایت کے ازالے کیلئے اگر تفتیش کی ضرورت ہو تو 24 کاروباری دن تک لگ سکتے ہیں۔ چوری یا گمشدہ کارڈ کی برامدگی کیلئے کارڈ ہولڈر بینک افسران، ملازمین، نمائندوں یا بینک کے اور قانون نافذ کرنے والے اداروں /ایجنٹوں کے ساتھ تعاون کرنے کا پابند ہوگا۔ بوقتِ ضرورت گمشدہ یا چوری شدہ کارڈ یا کارڈ کے غیر مجاز یا غلط استعمال سے بینک یا کارڈ ہولڈر کو ہونے والے نقصان سے بچنے  یا کم کرنے کیلئے  بینک کارڈ ہولڈر کی معلومات دیگر اداروں کو ظاہر کرنے کا مجاز ہوگا۔ اگر کارڈ گمشدگی یا چوری ہونے کی اطلاع دینے کے بعد مل جائے تو اسے دوبارہ استعمال نہ کیا جائے اور اسے فوری طور پر مقناطیسی پٹی اور چپ سے کاٹ کر بینک کو واپس کر دیا جائے۔

پن:

بینک کارڈ ہولڈر کی درخواست پر کارڈ ہولڈر کو پن جاری کرے گا۔ جب بینک کارڈ ہولڈر کو پن جاری کر دے، تو کارڈ ہولڈر کارڈ یا پن کے غیر مجاز استعمال سے بچاؤ کی ہر ممکن کوشش کرے گا جس میں پن کو صیغہِ راز میں رکھنا ، پن کو کارڈ پر یا عام طور پر کارڈ کے ساتھ رکھی جانے والی اشیاء پر نہ لکھنا ، موبائل میں محفوظ نہ کرنا، پن کو آسانی سے سمجھ آجانے کے طریقے سے نہ لکھنا اور کسی اور کا پن جان لینا یا جان لینے کا شک ہوجانے پر بینک  کو مطلع کر کے مذکورہ پِن کو مکمل طور پر تبدیل کرلینا شامل ہے۔ اگر کارڈ کے ساتھ پن لکھی ہو اور کارڈ گم یا چوری ہو جائے تو اس صورت میں پن سے ملحقہ غیر مجاز ٹرانزکشنز کا ذمہ دار کارڈ ہولڈر ہوگا۔ اگر کارڈ ہولڈر کسی کو پن بتا دے تو ایسی صورت میں پن سے ملحقہ غیر مجاز ٹرانزکشنز کا ذمہ دار کارڈ ہولڈر ہوگا۔

چارجز:

کارڈ ہولڈر اس بات سے اتفاق کرتا ہے کہ بینک کارڈ کے اجراء اور استعمال کیلئے چارجز، فیس، ڈیوٹیز، لیویز اور دیگر اخراجات (اجتماعی طور پر چارجز) لاگو کرے گا۔ مذکورہ استعمال میں الیکٹرانک فنڈ ٹرانسفر بھی شامل ہےجن کے تحت کسٹمر اکاؤنٹ میں کسی بھی وقت الیکٹرانک فنڈ ٹرانسفر کی صورت میں ایس بی پی (SBP) کے مروجہ قوانین کے مطابق لاگو کردہ فیس، ٹیکس، ڈیوٹیزاور /یا نوٹیفیکیشن/الرٹ چارجز ادا کرنے کا پابند ہوگا۔ کارڈ ہولڈر بینک کے مطالبہ پر ایسے تمام چارجز فوراً ادا/ واپس کرنے کا پابند ہوگا ۔ بینک اپنی صوابدید پر مذکورہ چارجز وقتاََ فوقتاََ تبدیل کرنے کا مکمل اختیار رکھتا ہے اور شیڈیول آف چارجز اپنی قریبی برانچ یا بینک کی ویب سائٹ سے حاصل کر نا کارڈ ہولڈر کی ذمہ داری ہے۔ تمام چارجز ناقابلِ واپسی ہیں ماسوائے جب بینک اس کے برعکس ہدایات جاری کرے۔ ڈیبٹ کارڈ کے اجراء اور استعمال کے تمام چارجز بینک کے شیڈول آف چارجز (Schedule of Charges) کے مطابق لاگو ہوں گے جو کہ بینک کی ویب سائٹ  www.fmfb.pk  پر دیکھے جا سکتے ہیں۔

حدِ استعمال:

ایک دن میں کسی بھی ٹرانزکشن کی انتہائی حد کی رقم اور اس سے منسلک دیگر شرائط کا تعین وقتاََ فوقتاََ بینک کرے گا اور اس کے متعلق کارڈ ہولڈر کو تحریری طور پر مطلع کرے گا اور جن کا اطلاق مذکورہ نوٹس کی تاریخ سے ہوگا۔کارڈ سے اکاؤنٹ میں فی الوقت موجود کریڈٹ بیلنس سے زیادہ رقم کی ٹرانزکشن نہیں کی جا سکتی۔ اگر بینک کو کسی ٹرانزکشن کی درخواست موصول ہو تو بینک ایسی کوئی اور ٹرانزکشن  (یا دیگر ٹرانزکشن کے امور) جو فی الوقت اکاؤنٹ میں ڈیبٹ نہ کی گئی ہوں یا ان قوائد و ضوابط میں درج شدہ حدود اور شرائط کو بھی مدِ نظر رکھ سکتا ہے،اور بینک کو اگر یہ لگے کہ مذکورہ ہذا ٹرانزکشن کی تکمیل کے باعث اکاؤنٹ میں بیلنس ٹرانزکشن سے منسلک چارجز کی مجموعی  رقم کے انخلاء کیلئے ناکافی ہوگی تو اس صورت میں بینک کو ایسی ٹرانزکشن مسترد کرنے کا مکمل اور حتمی اختیار حاصل ہے اور ایسی صورت میں مذکورہ ہذا ٹرانزکشن اکاؤنٹ میں ڈیبٹ نہیں کی جائے گی۔ بینک ایسی کسی ٹرانزکشن کو مسترد کرنے کے نتیجے میں ہونے والے نقصان کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ کارڈ ہولڈر ڈیبٹ کارڈ سے منسلک حدود تک رقم نکلواسکتا ہے، خریداری کر سکتا ہے اور اے ٹی ایم کے زریعے کسی اور اکاؤنٹ میں الیکٹرانک فنڈ ٹرانسفر کر سکتا ہے، تاہم الیکٹرانک فنڈ ٹرانسفر سے منسلک سرکاری ٹیکس، فیس اور نوٹیفیکیشن / الرٹ چارجز بینک کے مذکورہ بالا شیڈول آف چارجز کے مطابق لاگو ہوں گے۔ ڈیبٹ کارڈ سے منسلک روزانہ کی حدود مندرجہ ذیل ہیں:

PayPak گولڈ ڈیبٹ کارڈ:

ٹرانزکشن کی قسم / تفصیل رقم کی انتہائی حد (PKR)
بلوں کی ادائیگی 99,999/-
رقم نکلوانے کی حد 50,000/-
لوکل فنڈ ٹرانسفر 500,000/-
پاکستان بھر میں کسی اور بینک کے اکاؤنٹ میں فنڈ ٹرانسفر 500,000/-
خریداری 250,000/-

PayPak کلاسک ڈیبٹ کارڈ:

ٹرانزکشن کی قسم / تفصیل رقم کی انتہائی حد (PKR)
بلوں کی ادائیگی 99,999/-
رقم نکلوانے کی حد 50,000/-
لوکل فنڈ ٹرانسفر 500,000/-
پاکستان بھر میں کسی اور بینک کے اکاؤنٹ میں فنڈ ٹرانسفر 500,000/-
خریداری 250,000/-

ناکافی فنڈز:

اگر اکاؤنٹ میں ٹرانزکشن مکمل کرنے یا کوئی اور منسلکہ / متعلقہ چارجز بشمول مارک اپ ، فیس، چارجز، کرنسی تبدیلی چارجز، سروس فیس یا کوئی اور ادائیگی کرنے کیلئے رقم ناکافی ہو تو بینک اپنی صوابدید پر ( بغیر کسی ذمہ داری کے) بینک میں موجود کارڈ ہولڈر کے کسی بھی دوسرے اکاؤنٹ میں سے مطلوبہ رقم ٹرانسفر کر سکتا ہے۔ ایسی صورت میں کارڈ ہولڈر بینک کو اس بات کی رضامندی ، اجازت اور اختیار دیتا ہے کہ بینک کارڈ ہولڈر کے تمام اکاؤنٹس میں موجود بیلنس کو یکجا ، آپس میں ضم کرے اور ٹرانزکشن کی حتمی رقم کے برابر رقم وصول کر لے۔

کارڈ کی قبولیت سے انکار:

بینک کسی بھی ٹرانزکشن کے سلسلے میں ریٹیلر، سپلائر، دیگر بینکوں یا کارڈ کے استعمال کی مشین (card operated machine) کی جانب سے کارڈ کے استعمال سے انکار کی صورت میں ہونے والے کسی بھی قسم کے نقصان کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ بینک کارڈ ہولڈر کے کسی بھی ریٹیلر یا سپلائر سے متعلق کسی بھی تنازعے / دعوے کی تلافی ، دعویٰ یا جواب دعویٰ قبول کرنے کا پابند نہیں ہوگا۔ بینک کارڈ ہولڈر کے سپلائر سے خریدی یا استعمال کی گئی اشیاء یا / اور سروسز کی مقدار ، معیار، اکتفا، قبولیت اور قابلِ تجارت ہونے کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ ریٹیلر یا سپلائر کسی بھی صورت میں بینک کا ایجنٹ یا نمائندہ تصور نہیں کیا جائے گا اور نہ ہی بینک کسی بھی صورت میں ریٹیلر یا سپلائر کے کسی قول و فعل ، بھول چوک یا نمائندگی کی خلاف ورزی کا ذمہ دار ہوگا۔

سٹیٹمنٹ:

کارڈ ہولڈر لازمی طور پر اکاؤنٹ  سٹیٹمنٹ میں ٹٹرانزکشنز کے ریکارڈ  کی پڑتال کرے گا جو کہ بینک مقرر کردہ دورانیے (frequency) پر مہیاء کرے گا یا یہ سروس ایف ایم ایف بی کے فرسٹ اے ٹی ایم کے زریعے منی سٹیٹمنٹ کی صورت حاصل کی جا سکتی ہے۔اگر اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ میں کسی ٹرانزکشن کی تفصیلات میں کسی قسم کی بے قاعدگی یا تضاد پایا جائے تو کارڈ ہولڈر ٹرانزکشن کی تاریخ یا بینک کی طرف سے بھیجی گئی اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ کی تاریخ کے 7 دنوں میں (دونوں میں سے جو بعد میں آئے) بینک کومطلع کرے گا۔ اگر بینک کو سٹیٹمنٹ میں درج معلومات کے برعکس ٹرانزکشن کی تاریخ یا سٹیٹمنٹ کے اجرا کی تاریخ کے 7 دنوں میں اطلاع نہ دی جائے تو بینک تمام ٹرانزکشنز کو صحیح ماننے کا مجاز ہوگا اور اسے تمام مقاصد کیلئے حتمی ثبوت مانا جائے گا۔ علاوہ ازیں، اگر کارڈ ہولڈر کو کسی اے ٹی ایم سے ٹرانزکشن مکمل ہونے کے باوجود کیش کی کمی یا عدم ادائیگی ہو، یا اگر کارڈ ہولڈر کسی اور بینک کی اے ٹی ایم استعمال کر رہا ہو تو بینک   کے فراہم کردہ ریکارڈ پر انحصار کرنے کا مجاز ہوگا۔ اگر بینک فی الفور کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ میں سے  ٹرانزکشن کی رقم ڈیبٹ نہ کر پایا ہو تو بینک کو یہ اختیار حاصل ہوگا کہ بعد ازاں ایسی ٹرانزکشن کو بلا توسط کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ میں مکمل کر سکتا ہے۔

ٹرانزکشنز کی تنسیخ:

کارڈ ہولڈر ٹرانزکشن مکمل ہونے کے بعد اسے منسوخ نہیں کر سکتا۔

 پوسٹنگ:

ان شرائط و ضوابط کے تحت جیسے ہی بینک کو ٹرانزکشن کی مناسب ہدایت موصول ہوں گی بینک ٹرانزکشن کی رقم کو بشمول لاگو کردہ چارجز کے، اکاؤنٹ میں ڈیبٹ کرے گا البتہ اس امر میں تاخیر کے نتیجے میں ہونے والے کسی بھی نقصان کا ذمہ دار بینک نہیں ہوگا۔

رقم کی واپسی (Refund):

اگر ریٹیلر یا سپلائر بذریعہ ٹرانزکشن رقم واپس (refund) کرتا ہے تو بینک ریٹیلر یا سپلائر کی طرف سے مناسب ہدایات اور فنڈز موصول ہونے پر کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ میں رقم کریڈٹ کردے گا، تاہم مناسب ہدایات اور فنڈز موصول ہونے میں تاخیر کی صورت میں ہونے والے کسی نقصان کا ذمہ دار بینک نہیں ہوگا۔

پروموشنز (Promotions):

بینک بلا تفریق وقتاً فوقتاً اور اپنی مکمل صوابدید پر مخصوص کمپنیوں (affiliates) کی  مصنوعات یا سروسز کی اپنے چند یا تمام کارڈ ہولڈرز کو پروموٹ کر سکتا ہے۔ اگر ایسی کوئی پروموشن کارڈ ہولڈر کیلئے دستیاب کی جاتی ہے اور کارڈ ہولڈر اس سے فائدہ اٹھاتا ہے تو کارڈ ہولڈر ان شرائط و ضوابط سمیت بینک کی مشاورت سے کمپنی (affiliate) کی پروموشن کیلئے مقرر کردہ شرائط و ضوابط کی پاسداری بھی کرے گا۔ بینک ایسی پروموشن سے کسی بھی وقت کارڈ ہولڈر کو مطلع کیے بغیر دستبردار ہو سکتا ہے۔

اختتام (Termination):

بینک کارڈ ہولڈر کو اس کےآخری دیے گئے پتہ پر تحریری شکل میں مطلع کر کے ان شرائط و ضوابط میں موجود معاہدے کو ختم کر سکتا ہے۔کارڈ ہولڈر بینک کو مطلع کر کے، کارڈ کی مقناطیسی پٹی اور چپ کو کاٹ کر اور بینک کو کارڈ واپس بھیج کر ان شرائط و ضوابط میں شامل ہونے والے معاہدے کو ختم کر سکتا ہے۔ معاہدے کا اختتام درجِ ذیل پیرا گرافوں کی شق کے مطابق کارڈ ہولڈر کی جانب سے معاہدے کے اختتام کا نوٹس موصول ہونے کے بعد نافذ العمل ہوگا۔

معاہدہ مکمل طور پر اور ہر طرح سے نافذ العمل ہوگا:

ان شرائط و ضوابط پر مبنی معاہدہ مکمل طور پر اور ہر طرح سے نافذ العمل ہوگا جب تک کہ معاہدے کے اختتام سے پہلے کی گئی ٹرانزکشنز مکمل طور پر اکاؤنٹ میں ڈیبٹ نہ کی گئی ہوں۔

معاہدے کے اختتام کے بعد:

ان شرائط و ضوابط پر مبنی معاہدے کے اختتام کی صورت میں بھی معاہدے کے اختتام سے پہلے کے نامکمل یا مکمل کئے گئے اقدامات کی بابت ذمہ داری پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔

ذمہ داری کی حدود (Limitation on Liability) :

بینک ہڑتال، صنعتی اقدامات، بجلی کی عدم فراہمی، سسٹمز  اور ساز و سامان (equipment) کی خرابی اور بینک کے اختیارات سے بالا تر وجوہات کی بنا پر خدمات کی عدم فراہمی یا تاخیر کی صورت میں کارڈ ہولڈر کے کسی قسم کے نقصان کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ کارڈ ہولڈر یہ تسلیم کرتا ہے کہ وہ کارڈ کے استعمال کے ہر خطرے ، قیمت اور نتیجے کی ذمہ داری قبول کرتا ہے اور بینک کسی بھی صورتِ حال میں کارڈ کے استعمال کے وقت اے ٹی ایمز کے کمروں اور جگہوں میں کارڈ ہولڈر کی حادثاتی موت ، زخمی ہونے اور املاک کے نقصان ہونے کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ اس کے قطع نظر کہ کارڈ ہولڈر نے بینک کو مناسب اطلاع اور تفصیلات فراہم کردی ہوں کارڈ ہولڈر جب بھی کارڈ کو یوٹیلٹی بلز یا دیگر بلوں کی ادائیگی کیلئے استعمال کرے گا تو ممکنہ ادائیگی کی تاخیر کے نتیجے میں لاگو ہونے والے جرمانے ، اخراجات یا سرچارج لاگو ہونے کی صورت میں ہونے والے کسی قسم کے نقصان کی تمام تر ذمہ داری کارڈ ہولڈر کی ہوگی۔

شرائط و ضوابط میں ردوبدل:

بینک ان شرائط و ضوابط میں اور ان سے  منسلک چارجز میں اپنی صوابدید پر وقتاََ فوقتاََ ردو بدل کر سکتا ہے (خواہ وہ عمومی ، خصوصی یا بینک کےشیڈول آف چارجز میں تشہیر کی صورت میں ہو) اور اس امر کی اطلاع کارڈ ہولڈرکو دے گا۔ ایسی ردو بدل کا اطلاق نوٹس یا شیڈول آف چارجز میں درج شدہ تاریخ یا بینک کی وضع کردہ کسی اور تاریخ سے ہوگا۔ تاہم کارڈ کے استعمال کے سلسلے میں PayPak کی جانب سے لاگو کردہ فیس یا چارجز یا ان میں ردو بدل کا اطلاق صرف اور صرف کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ میں ہوگا اور بینک اس کا ذمہ دار نہیں ہوگا۔

معلومات کا اظہار:

کارڈ ہولڈر بینک کو اس بات کی اجازت دیتا ہے کہ وہ کارڈ ہولڈر سے متعلق معلومات بینک کے گروپ آف کمپنیز ، تھرڈ پارٹی پروسسرز، سروس فراہم کرنے والی کمپنیوں یا /اور بینک کے زیرِ کار کارڈ پرسنلائزیشن فرمز (card personalization firms) کو وقتاً فوقتاً فراہم کر سکتا ہے۔ ان معلومات میں نہ صرف  کارڈ ہولڈر کی تفصیلات بلکہ کارڈ، اکاؤنٹ اور کسی بھی ٹرانزکشن سمیت دیگر معلومات بھی شامل ہیں جو کہ بینک  کو اپنی صوابدید پر موزوں لگے۔ بینک کارڈ ہولڈر، کارڈ، اکاؤنٹ یا کسی ٹرانزکشن  سے منسلک کوئی بھی معلومات قانونی ضرورت ، عمومی طریقہ کار اور استعمال کیلئے ظاہر کر سکتا ہے۔

بری الذمہ (Indemnity):

کارڈ ہولڈر کے مجاز یا قانونی ، یا پھر غیر مجاز یا غیر قانونی  استعمال یا استعمال کی اجازت دینے  کی صورت میں ، یا ان شرائط و ضوابط یا اکاؤنٹ کے شرائط و ضوابط کی خلاف ورزی کے نتیجے میں ہونے والے کسی بھی قسم کے نقصان سے بینک کو بری الذمہ قرار دیتا ہے۔ اس سلسلے میں اگر کارڈ ہولڈر کی موت واقع ہو جاتی ہے تو کارڈ ہولڈر کے لواحقین  فوری طور پر بینک کو مطلع کریں گے تاکہ اکاؤنٹ کو فوری طور پر منجمد اور کارڈ کو منسوخ کیا جائے۔ بینک کو کارڈ ہولڈر کی وفات کی تحریری خبر موصول ہونے سے پہلے تک کارڈ ہولڈر کے پن (PIN) کو استعمال کرتے ہوئے اکاؤنٹ کی تاریخ ِ انجماد سے قبل کارڈ سے کی گئی تمام ٹرانزکشنز کارڈ ہولڈر کے انفرادی اکاؤنٹ میں درج ہوں گی اور کارڈ ہولڈر کے ورثاء  کی جانب سے جانشینی سرٹیفکیٹ (sucession certificate) یا بینک کی طرف سے وضع کردہ دیگر دستاویزات کی فراہمی تک کارڈ ہولڈر کا اکاؤنٹ منجمد رہے گا۔

رائج الوقت قانون (Governing Law):

یہ شرائط و ضوابط ایف ایم ایف بی کے ڈیبٹ کارڈ کے اجراء اور استعمال کے شرائط و ضوابط کے ساتھ ملا کر پڑھنا لازمی ہیں۔ یہ شرائط و ضوابط سٹیٹ بینک آف پاکستان کے وقتاً فوقتاً لاگو کردہ شرائط و ضوابط ، اعلمیے اور احکامات کے ماتحت ہیں اور اسلامی جمہوریہِ پاکستان کے substantive and procedural  قوانین کے ماتحت ہیں۔ پاکستانی عدالتوں کو امتیازی حتمی اختیار ہوگا۔

تشریح (Interpretation) :

یہ شرائط و ضوابط اردو میں شائع کی جا رہی ہیں تاہم مندرجہ بالا شرائط و ضوابط کی تشریح اور ان میں موجود شقوں میں کسی بھی تضاد یا تنازعہ کی صورت میں انگریزی میں شائع کی گئی شرائط و ضوابط غالب اور مستند تصور کی جائیں گی۔  انگریزی میں شائع کی گئی شرائط و ضوابط حاصل کرنے کیلئے بینک کی ویب سائٹ www.fmfb.pk کو وزٹ کریں۔

رابطے کی تفصیلات:

بینک کارڈ ہولڈر کی طرف سے فون پر،  تحریری  طور پر یا کسی دستاویز میں درج شدہ طور پر ، رابطے  کی تازہ ترین تفصیلات بینک کے مجاز دفتر یا افسر کو ملنے کی صورت میں کارڈ ہولڈر کے کوائف میں نئی تفصیلات کا اندراج کرنے کا اختیار رکھتا ہے۔